Wednesday, June 5, 2013

تلاشِ معانیت

ہم میں سے ہر کوئی معانیت کی تلاش میں رہتا ہے۔ کوئی زندگی کا مقصد تلاش کرنے میں لگا ہے تو کوئی باطنی اور روحانی منازل طے کرنے کی کوشش میں سرگرداں ہے۔ کچھ لوگ زیادہ سے زیادہ محنت کر کہ کامیاب ہونےاور ترقی کی منازل طے کرنے کو پرفیکشن یا معا نیت کی انتہا سمجھتے ہیں تو کچھ لوگ روحانیت کی منازل طے کر کہ خودی کو کھو کہ اپنی ذات کے پانے کےعمل کو معانیت یا مقصدیت کی انتہا سمجھتے ہیں۔ اس سلسلے میں ہر ایک کا فلسفہ اور دیکھنے کا نظریہ مختلف نظر آتا ہے۔ اس سلسلے میں یہ بھی کہنا مشکل ہے کہ کس کی ڈیفینشن یا کس کا نقطہِ نظر سہی ہے کیونکہ کسی بھی چیز کے سہی یا غلط ہونے کا انحصار ہماری انفرادی ویلیوز اور حالات و واقعات پہ ہوتا ہے۔ کسی کے لیے کوئی چیز کسی ایک وقت میں سہی جبکہ وہی چیز کسی اور وقت میں غلط بھی ہو سکتی ہے۔ اسی طرح، کسی ایک کے لیے جو بات بلکل قابلِ قبول اور سہی ہو، وہی بات کسی دوسرے کے لیے بلکل نا مناسب اور غلط ہو سکتی ہے۔

اس بات کے پیشِ نظر، غلط یا سہی، یا مادیت یا روحانیت کی بحث چھوڑ کہ توازن یا بیلنس کی سوچ کو پروان چڑھانے کی ضرورت ہے۔ شاید اسی لیے دین اور دنیا کو ساتھ لے کہ چلنے کی بات کی جاتی ہے۔ مادیت اور روحانیت کا امتزاج ہی وقت کی ضرورت ہے اور شاید اسی کے ذریعے ہی معانیت کی حدود تک پہنچا اور انہیں پار کیا جا سکتا ہے۔


aali said...

Interesting thoughts. I believe that the terms "moderation" and "balance" are too vague to help us arrive at a meaningful resolution of these debates. Unless, the idea here is to suggest a superficial kind of liberalism.

Perhaps what we need is not two different sets of eyes to view the world, but the same eyes, enlightened by a spiritual vision, that can see through the reality of things. We need Prophets!

See the following excerpt from one of Dr. Ali Shariati's speeches. You will see echoes of Allama Iqbal's thought below.

"Prophets are not in the same category as philosophers, scientists, technicians or artists. The prophets often emerged from among the masses and were able to communicate with the masses to introduce new mottoes, project new vision, start new movements, and beget new energies in the conscience of the peoples of their time and places. The great revolutionary, uprooting and yet constructive movements of the prophets caused frozen, static and stagnant societies to change their directions, life-styles, outlooks, cultures and destinies.... Similar to the prophets, the enlightened souls also neither belongs to the community or scientists nor to the camp of unaware and stagnant masses. They are aware and responsible individuals whose most important objective and responsibility is to bestow the great God-given gift of "self- awareness" (khod-agahi) to the general public. Only self-awareness transforms static and corrupt masses into a dynamic and creative cantor, which fosters great genius and gives rise to great leaps, which in turn become the springboard for the emergence of civilization, culture and great heroes."


Post a Comment

Powered by Blogger.